breaking news New
may 2019 ماوں کا عالمی دن - سحر ڈاٹ ٹی وی - بلاگز

12-may-2019 – ماؤں کا عالمی دن

ﯾﻮﻡِ ﻣﺎﮞ ، ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﻋﺎﻟﻤﯽ ﺩﻥ ، ﯾﻮﻡ ﻣﺎﺩﺭ ﯾﺎ ﻣﺎﺅﮞ ﮐﺎ ﺩﻥ ﮨﺮ ﺳﺎﻝ ﯾﮧ ﺩﻥ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﻋﺎﻟﻤﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﻣﺘﻔﻘﮧ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻧﮩﯿﮟ، ﯾﮧ ﺩﻥ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺗﺎﺭﯾﺨﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺍﻃﺎﻟﯿﮧ ﺳﻤﯿﺖ ﺍﮐﺜﺮ ﻣﻤﺎﻟﮏ میں ﯾﮧ ﺩﻥ ﻣﺌﯽ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺍﺗﻮﺍﺭ ﮐﻮ ﻣﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔۔ ﺍﻭﺭ ﮐﺌﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﯾﮧ ﺩﻥ ﺟﻨﻮﺭﯼ ،ﻣﺎﺭﭺ ،ﻧﻮﻣﺒﺮ ﯾﺎ ﺍﮐﺘﻮﺑﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﻮ ﻣﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻘﺼﺪ ﺍﭘﻨﯽ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﮐﯽ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮐﺮﻧﺎ، ﺍﻥ ﮐو ﺧﺪﻣﺖ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺧﻮﺷﯽ ﺩﯾﻨﺎ ﮨﮯ۔۔۔
مئی کا مہینہ شروع ہوتے ہی نا صرف ملکی بلکہ بین الاقوامی سطح پر ماں جیسی معزز ہستی کو خراجِ تحسین پیش کرنے کے لئیے یہ دِن منایا جاتا ہے۔
سوہنی اور پیاری سی ہستی ماں سے اظہارِ محبت کا دِن “ماؤں کا عالمی دِن۔” مدر ڈے
مدر یعنی کہ ماں کا لفظ کائنات میں سب سے زیادہ بولا جانے والا لفظ ہے ۔۔
ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﺍﻟﻔﺎﻅ ؛ ﺍﻣﺎﮞ، ﺍﻣﯽ، ﻣﻤﯽ، ﻣﺎﻣﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺩﺭ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﮯ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﺟﻦ ﺳﮯ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﻟﻔﻆ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﺯﺑﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﺻﺎ ﯾﮑﺴﺎﻧﯽ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﻠﻤﮧ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﻨﻄﻘﯽ ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﯿﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﯽ ﺍﺻﻞ ﺍﻟﮑﻠﻤﮧ ﺍﯾﮏ ﮐﺎﺋﻨﺎﺗﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﮐﯽ ﺣﺎﻣﻞ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﺯﺑﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ، ﺍﺱ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﺍﺩﺍ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﭼﻨﺪ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﺳﮯ ﺍﺧﺬ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﺐ ﺑﭽﮧ ﺭﻭﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﭼﻼﻧﮯ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﮐﯽ ﺣﺪﻭﺩ ﺗﻮﮌ ﮐﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺨﺼﻮﺹ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﻧﮑﺎﻟﻨﮯ ﮐﮯ ﻗﺎﺑﻞ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﻟﻨﺎ ﺳﮑﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻋﺎﻡ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻭﮦ ﺍُﻡ ﺍُﻡ / ﻣﺎ ﻣﺎ / ﻣﻢ ﻣﻢ / ﻣﻤﺎ ﻣﻤﺎ ‏( ﭘﺎ ﭘﺎ ‏) ﻭﻏﯿﺮﮦ ﺟﯿﺴﯽ ﺳﺎﺩﮦ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﻧﮑﺎﻟﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﮯ ﺟﺬﺑﮯ ﺳﮯ ﺳﺮﺷﺎﺭ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﻧﮯ ﺍﻥ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺭﺟﻮﻉ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﺟﺲ ﺳﮯ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﺴﯽ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﺨﺎﺏ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺟﻮ ﻧﺴﺒﺘﺎً ﻧﺮﻡ ﺳﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﯾﻌﻨﯽ ﻣﯿﻢ ﺳﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﭖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻋﻤﻮﻣﺎً ﭘﮯ ﺳﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﺯﺑﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔
ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﻋﺮﺑﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍُﻡ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍُﻡ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﺠﯿﺪ ﻣﯿﮟ 84 ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺁﯾﺎ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﮐﯽ ﺟﻤﻊ ﺍُﻣﮭﺎﺕ ﮨﮯ، ﯾﮧ ﻟﻔﻆ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﺠﯿﺪ ﻣﯿﮟ ﮔﯿﺎﺭﮦ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺁﯾﺎ ﮨﮯ، ﺻﺎﺣﺐ ﻣﺤﯿﻂ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻟﻔﻆ ﺍُﻡ ﺟﺎﻣﺪ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﭽﮧ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺁﻭﺍﺯ ﺳﮯ ﻣﺸﺘﻖ ﮨﮯ ﺟﺐ ﻭﮦ ﺑﻮﻟﻨﺎ ﺳﯿﮑﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺁﻏﺎﺯ ﻣﯿﮟ ﺍُﻡ ﺍُﻡ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻭﻟﯿﻦ ﻣﻌﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ، ﻭﯾﺴﮯ ﺍُﻡ ﮐﮯ ﻣﻌﻨﯽ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﭼﯿﺰ ﮐﯽ ﺍﺻﻞ، ﺍُﻡ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺗﯿﻦ ﺣﺮﻑ ﮨﯿﮟ ‏( ﺍ + ﻡ + ﻡ ‏) ﯾﮧ ﻟﻔﻆ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﻣﺎﮞﭘﺮ ﺑﻮﻻ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻌﯿﺪ ﻣﺎﮞ ﭘﮧ ﺑﮭﯽ۔ ﺑﻌﯿﺪ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﻧﺎﻧﯽ، ﺩﺍﺩﯼ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺣﻀﺮﺕ ﺣﻮﺍ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮩﺎ ﮐﻮ ﺍﻣﻨﺎ ‏( ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ‏) ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ۔
ماں اللہ تعالیٰ کی نعمتوں میں سے کیا ہی عجیب نعمت ہے ” لیکن انسان ہے کہ اس نعمت کی قدر اس وقت تک نہیں کرتا جب تک کہ یہ چھن نہ جائے خوش قسمت ہیں وہ لوگ جنہیں ماں جیسی عظیم نعمت نصیب ہو اور وہ اس نعمت کے شکر کا حق ادا کر رہے ہوں انسان تو آخر انسان ہے حیوانوں اور چرند پرند میں بھی ماں اور اولاد کا عجیب ہی رشتہ ہوتا ہے ایک چڑیا جو کہ بنی نوع انسان سے دور بھاگتی ہے لیکن اپنے بچوں کی خاطر وہ بھی کیسے دیوانہ وار سروں پر منڈلا رہی ہے ماں کی عظمت کی تعلیم دیتے ہوئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ کاش میری ماں زندہ ہوتی میں نما ز کی نیت باندھ کر کھڑا ہوتا تو میری ماں مجھے آواز دیتی محمد! تومیں نماز کو چھوڑ کر جواب دیتا لبیک یا امی ۔۔۔
ﺩﻧﯿﺎ ﮐﺎ ﺳﺐ ﺳﮯ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﺭﺷﺘﮧ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﮨﮯ، ﺍﺗﻨﺎ کہ اللہ پاک ﻧﮯ ﺍﺳﯽ ﺭﺷﺘﮯ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﻨﺪﮮ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ ﭘﯿﻤﺎﻧﮧ ﺭﮐﮭﺎ۔ ﯾﮧ ﻭﮦ ﺑﻨﺪﮬﻦ ﮨﮯ ﺟﻮ ﭼﺎﮦ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭨﻮﭨﺘﺎ، ﺭﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﮌﺗﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ، ﺁﺩﻣﯽ ﻓﻨﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺍﺳﮑﺎ ﻧﺎﻡ ﻭ ﻧﺸﺎﻥ ﮨﯽ ﻣﭧ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺟﺐ صوﺭ ﭘﮭﻮﻧﮑﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺩﻧﯿﺎ ﺟﮩﺎﻥ ﮐﯽ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯿﺎﮞ، ﺍﺳﻨﺎﺩ، ﺧﻄﺎﺑﺎﺕ ﺳﺐ ﺧﺎﮎ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﯽ ﺍﯾﮏ ﺭﺷﺘﮧ ﺍﺳﮑﺎ ﻧﺸﺎﻥ، ﯾﮩﯽ ﺍﺳﮑﺎ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﺭﮦ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
شاعر ِمشرق علامہ ڈاکٹر محمد اقبال ؒ ”اسرارِ خودی “ میں اسلام میں ماں کی عظمت کے حوالے سے اپنی مشہور فارسی نظم
”درمعنی ایں کہ بقائے نوع از امومت است و حفظ و احترام امومت اسلام است “
میں لکھتے ہیں کہ ماں کے منصب اور اُس کے حفظ و احترام کا ضامن اسلام ہے ۔ اقبال ؒ کی اس نظم کا ترجمہ کچھ یوں ہے کہ
”اگر ٹھیک طور پر دیکھو تو ماں کا وجود رحمت ہے ، اس کی بناءپر کہ اسے نبوت سے نسبت ہے “
اس کی شفقت، پیغمبرانہ شفقت جیسی ہے ،جس سے قوموں کی سیرت سازی ہوتی ہے ۔ماں کے جذبہ ءمحبت کی بدولت ہماری تعمیر پختہ تر اور پیشانی کی سلوٹوں میں ہماری تقدیر پنہاں ہوتی ہے ۔ اگر تُم الفاظ کے معنی تک رسائی رکھتے ہو تو لفظ اُمت پر غور کرو ۔ اِس میں بڑے بڑے نکات ہیں۔ مقصود ِ کائنات ﷺ نے فرمایا ”ماں کے قدموں تلے جنت ہے “ ملتِ رحمی رستے کی تکریم پر قائم ہے ۔ اگر یہ نہیں تو زندگی کا ہر کام خام رہ جاتا ہے ۔ ”مامتا“سے زندگی سرگرم ہے ۔”مامتا“ سے ہی زندگی کے اسراربے نقاب ہوتے ہیں، ہماری ملت کی ندی میں ہر پیچ و تاب ”ماں “ سے ہے ۔اس ندی میں موج ، گرداب اور بُلبلے اسی وجود کے باعث ہیں۔ ملت کو ماں کی آغوش سے اگر ایک مُسلمان حاصل ہوجائے ، جو غیرت مند اور حق پرست ہو تو ہمارا وجود اِ ن پریشانیوں سے محفوظ ہو جائے ،اس شام کی بدولت ہماری صبحِ دُنیا کو روشن کر دے ۔”ماں “ کی عظمت اور اُس کے خلوص و وفا کے متعلق کسی نے کیا خُوب کہا ہے کہ

ماں ، خلوص و مہر کا پیکر ، محبت کا ضمیر
ماں خُدا کارحم ، وہ دُنیا میں جنت کی سفیر
ماں نشانِ منزل ِ آدم ، تقدس کا پیام
بوعلی سینا نے کہا اپنی زندگی میں محبت کی سب سے اعلیٰ مثال میں نے تب دیکھی جب سیب چار تھے اور ہم پانچ تب میری ماں نے کہا مجھے سیب پسند ہی نہیں ہیں۔
ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﮐﺎ ﻋﮑﺲ ’’ ﻣﺎﮞ ‘‘ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﮐﺌﯽ ﻣﻔﮑﺮﯾﻦ ﮐﮯ ﺍﺭﺷﺎﺩﺍﺕ ﺫﯾﻞ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﺝ ﮐﺌﮯ ﺟﺎﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ :
ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺍﺋﮯ ’’ ﻣﺎﮞ ‘‘ ﮐﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ۔ ‏( ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮨﯿﻮﮔﻮ ‏)
ﮨﺮ ﺷﺨﺺ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﮐﯽ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﺍﭘﻨﯽ ’’ ﻣﺎﮞ ‘‘ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﺩﯾﮑﮫ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ‏( ﺍﮐﺒﺮﺍﻋﻈﻢ ‏)
ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺴﺮﺗﯿﮟ ﭘﯿﺎﺭ ﺳﮯ ’’ ﻣﺎﮞ ‘‘ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯽ ﻣﻞ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ‏( ﻧﺎﺩﺭ ﺷﺎﮦ ‏)
ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﺩﻭ ﮨﯽ ﮨﺴﺘﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺟﮭﮑﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﺍﯾﮏ ﻣﯿﺮﺍ ﺧﺪﺍ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﯿﺮﯼ ’’ ﻣﺎﮞ ‘‘ ‏( ﻧﺎﺳﻮ ‏)
ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮈﺭﻭ ﮐﮧ ﻣﺎﮞ ﻧﻔﺮﺕ ﺳﮯ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﮨﺎﺗﮫ ﺍﭨﮭﺎﺋﮯ۔
‏( ﺍﻓﻼﻃﻮﻥ ‏)
ﺳﺨﺖ ﺳﮯ ﺳﺨﺖ ﺩﻝ ﮐﻮ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﭘﺮﻧﻢ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻮﻡ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ۔ ‏( ﻋﻼﻣﮧ ﻣﺤﻤﺪ ﺍﻗﺒﺎﻝ ‏)
ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﮨﻤﺪﺭﺩﯼ ﮐﯽ ﺗﻮﻗﻊ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﮨﻤﺪﺭﺩ ﮨﻮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ۔ ‏( ﺍﺭﺳﻄﻮ ‏)
ﺑﭽﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﯽ ﺟﮕﮧ ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﺩﻝ ﮨﮯ ۔ ‏(ﺷﮑﺴﭙﯿﺌﺮ ‏)
ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﺎ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮﯼ ﺗﺤﻔﮧ ﻣﺎﮞ ﮨﮯ۔ ‏( ﻣﻠﭩﻦ ‏)
ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﮐﯽ ﺁﺋﯿﻨﮧ ﺩﺍﺭ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ۔ ‏(ﺍﻟﻄﺎﻑ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﺎﻟﯽ ‏)
ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺣﺴﯿﻦ ﺷﮯ ﺻﺮﻑ ﻣﺎﮞ ﮨﮯ ۔ ‏( ﻣﺤﻤﺪ ﻋﻠﯽ ﺟﻮﮨﺮ ‏)
ﺍﮔﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﺟﺪﺍ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮔﻞ ﮨﻮ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ۔ ‏( ﺣﮑﯿﻢ ﻟﻘﻤﺎﻥ ‏)
ﻣﺎﮞ ﮐﺎ ﭘﯿﺎﺭ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﺳﯿﮑﮭﻨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺘﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ۔ ‏( ﺍﯾﻤﺮﺳﻦ ‏)
ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﺮﻧﯿﻞ ﺑﻨﺎ ﺩﯾﺎ۔ ‏( ﺟﻨﺮﻝ ﺍﯾﻢ ﺍﯾﭻ ﺍﻧﺼﺎﺭﯼ ‏)
مدر ڈے ماں جیسی عظیم ہستی کو خراج تحسین و عقیدت پیش کرنے کا دن ہے یہ وہ عالمی دن ہے جس پر تمام مذاہب و مکاتب حتی کہ دہریہ تک متفق ہیں آئیں آج یہ عہد کریں کہ اپنی پیاری ماں کو اپنی ذات اپنی زبان اپنے کلام اپنے کام سے لمحہ بھر کے لئیے بھی تکلیف نہیں دیں گے ماں سے محبت اپنی زندگی کا جزو لازم ماں کا خیال اپنی سعادت مندی ماں کی خدمت ثواب دراین سمجھیں گے ماں کا کوئی نعم البدل نہیں بس یہ سوچ کر اب سے چلیں گے ماں تیری عظمت کو سلام ماں تجھ سا کوئی نہیں میری محبتوں کا مرکز و محور میری پیاری ماں تو رہئیے خدا کی ہر لمحہ حفظ و اماں میں

<

0 Comments

Leave a Comment

Login

Welcome! Login in to your account

Remember me Lost your password?

Lost Password